فن خطاطی ایک لطیف فن ہے اس کا تحفظ وفروغ ہمارادینی وعلمی فریضہ ہے : ڈاکٹر محمد علی ربانی

فن خطاطی ایک لطیف فن ہے اس کا تحفظ وفروغ ہمارادینی وعلمی فریضہ ہے : ڈاکٹر محمد علی ربانی
فن خطاطی ایک لطیف فن ہے اس کا تحفظ وفروغ ہمارادینی وعلمی فریضہ ہے : ڈاکٹر محمد علی ربانی

ایران کلچرہاؤس میں دو روزہ خطاطی ورکشاپ اختتام پذیر

فن خطاطی ایک لطیف فن ہے اس کا تحفظ وفروغ ہمارادینی وعلمی فریضہ ہے : ڈاکٹر محمد علی ربانی

نئی دہلی:29 ستمبر (سیاسی تقدیربیورو) ایران کلچرہاؤس نئی دہلی میں انجمن خطاطان ہند کے باہمی اشتراک سے دو روزہ خطاطی ورکشاپ کا انعقاد کیا گیا۔اس ورکشاپ میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے اردو اکادمی دہلی کے وائس چیرمین حاجی تاج محمد نے شرکت۔ورکشاپ میں ایران مشہور خطاط مسعود محبی نے خطاطی سے متعلق خصوصیات بیان کی۔ دہلی کے مختلف علاقوں خطاطی سے متعلق چلنے والے مراکز کے طلبہ وطالبات نے شر کت۔ اردو اکادمی کے سابق استاد عطاء اللہ ،وسیم احمد مدرسہ عالیہ فتح پوری سے مولانا ابرار احمد،غالب اکادمی دہلی کے استاد خطاطی عبد الرحمن ،صوفیہ ایجوکیشنل سینٹرسے استاد زبیر احمد و عبد الرحمن قلم کار ،فروزہاشمی اور اسی طرح دیگر اساتذہ نے شرکت کی۔اس موقع پر ایران کے کلچرل کاؤنسلر ڈاکٹر محمد علی ربانی نے مہمانوں کا پرُتپاک استقبال کرتے ہوئے کہا کہ فن خطاطی ایک فن خط تحریری ہے۔ یہ فن دنیا کے ہر گوشے اور ہر زبان میں پایا جاتاہے۔ اسلامی خطاطی در اصل دستی تحریر ہوتی ہے اور خطاطی کو فنکارانہ سے پیش کرنے کا نام فن خطاطی ہے۔ خطاطی کو جدید فنون لطیفہ میں بھی شمار کیا جاتاہے اور آج کل کیلیگرافی یعنی فن خطاطی کا رجحان بھی بڑ ھ رہاہے۔ فن خطاطی ایک لطیف ہے اس کا تحفظ وفروغ ہمارادینی وعلمی فریضہ ہے ۔ فن خطاطی کی وجہ تسمیہ پیش کرتے ہوئے انہو ں نے کہا کہ فن خطاطی اتنا ہی قدیم فن ہے جتنے کہ لوح وقلم بر صغیر ہند میں مشہور خطاط کثرت سے گزرے ہیں۔ دہلی کی قدیم تاریخی عمارتیں آج بھی اس کا شاہد ہیں۔تاج محل، قطب مینار ، شاہی مسجد دہلی اور دیگر قلعہ سلاطین کے زمانے میں فنون لطیفہ کو ترقی ہوئی۔فن خطاطی کی ترقی وترویج کے لئے انجمن خطاطان ہند کا قیام عمل میں آنا ایک اہم قدم ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ اس تعلق سے ایران اور ہندوستان کا رشتہ ہزاروں سال پرانا ہے ۔میں اس موقع پر آئے ہوئے سبھی خطاط حضرات کو مبارکباد پیش کرتاہوں۔ ایران کے فن خطاطی کے جید استاد مسعود محبی نے فن خطاطی سے متعلق طلبہ واساتذہ کو اس فن کی باریکیوں سے آشنا کرایا انہوں نے کہا کہ یہ فن میں نے ایران کے ماہر استادوں سے سیکھا ہے میں نے  اس فن کو ایران کے گاؤں گاؤں اور گلی کوچوں تک پہنچانے کی کوشش کی ہے۔آج یہاں ہندوستان کے خطاطوں سے مل کر مجھے خوشی محسوس ہورہی ہے میں چند روز قبل اودے پور کی فن خطاطی کے تعلق منعقد نمائش میں گیاآج میں دیکھ رہاہوں کہ یہاں طلبہ اور اساتذہ میں فن کو سیکھنے کی بہت دلچسپی دکھائی دیتی ہے۔ 

میں چاہتاہوں ہندوستان کے ہر ادارے کے طلبہ کواس فن سے آشنا کراؤں   انہوں نے فن خطاطی کے لکھنے کے طریقے اور نوک پلک اور لفظوں کو جوڑنا سکھایا۔اس موقع پر انجمن خطاطان ہند کے صدر انیس صدیقی نے بھی خطاب کیا۔اس دوروزہ خطاطی ورکشاپ کا افتتاح اردو اکادمی کے وائس چیرمین حاجی تاج محمد نے کیا۔ انہوں نے کہا کہ ایران کلچرہاؤس اور انجمن خطاطان ہند کا یہ بہت بڑا قدم ہے اور ایران کلچرہاؤس موقع بہ موقع خطاطی و فارسی زبان سے متعلق کچھ نہ کچھ پروگرام کرتاہی رہتا ہے جو قابل مبارکباد ہیں فن خطاطی یہ ایک ایسا فن ہے  جو ہندوستان اور ایران کے رشتوں کو جوڑتا ہے آج بھی ایران میں فن خطاطی عروج پر ہے۔ جس کو ایران کے خطاط آج بھی زندہ رکھے ہوئے ہیں۔اس ورکشاپ میں طلبہ اوراساتذہ کو منفرد اور دلکش انداز میں خطاطی کے فن سے آشنا کرایاگیا قلم بناے کے طریقے روشنائی بنانے کے طریقے ،حتی کہ بیٹھنے اور لفظوں کے جوڑ نے اوربنانے کے طریقے بھی سکھائے گئے۔ جس کو سبھی نے بہت پسند کیا۔خطاطی کی یہ دوروزہ ورکشاپ آج اختتام پذیر ہوئی جس میں مختلف انجمنوں کے طلبہ واساتذہ نے شرکت کی ۔ انجمن خطاطان ہند کے جنرل سکریٹری قاری محمد یاسین نے تمام مہمانوں کا شکریہ اداکیا اور آئندہ ۸ ؍اکتوبرکو قرآنی خطاطی کی نمائش کی دعوت دی جو ایران کلچرہاؤس نئی دہلی میں منعقد ہوگی جس میں ایران اور ہندوستان کے جید اساتذہ کی شرکت متوقع ہے۔